خان صاحب کے چودہ اگست کے مارچ کے اعلان کے بعد ہم سب منتظر تھے کہ اب ن لیگ کیا کرتی ہے۔ کیا یہ لوگ انصاف دینے پر آمادہ ہونگے؟ لیکن کچھ ہی دنوں میں سب نے دیکھ لیا کہ انصاف تو دور کی بات الٹا انھوں نے ارسلان افتخار کے ذریعے خان صاحب کی ذات پر حملے شروع کر دیے اور مسلسل اسی بات کی رٹ لگائے رکھی کہ ہمیں کام کرنے دیا جائے۔ جو ہو گیا اُسے بھول جا۔کے پی میں کام کر و اور ہمیں اپنا کام کرنے دو۔ جبکہ ہم تو الیکشن دھاندلی پر انصاف مانگ رہے ہیں۔ اور اب ن لیگ نے چودہ اگست کو اسلام آباد میں احتجاجی ریلیوں اور جلسوں پر پابندی لگا کر سرکاری خرچے پر تقریبات کا اعلان کر دیا ہے۔ جی ہاں انصاف کی امید نہیں ان حکمرانوں سے لیکن سوال یہ ہے کہ بکرے کی ماں کب تک خیر منائے گی کیونکہ الیکشن دھاندلی پر انصاف لیے بغیر تحریک انصاف آرام سے بیٹھنے والی نہیں۔ آج نہیں تو کل انھیں اپنی مجرمانہ حرکتوں کا جواب دینا ہی پڑا گے۔

Nothing can stop Azadi March on 14th August – Shireen Mazari

ARVE Error: need id and provider