Help us spread the message of change - Share with your friends

پیپلز پارٹی کی مقبولیت کا اندازہ اس بات سے کر لیں کہ انہیں بھی کراچی میں ایک ناکام سرکاری جلسہ کرنا پڑا ۔ بلوچستان کی غریب عوام سے لے کر سندھ کے بے بس لوگوں کو بریانی کھلا کر ایک ہزار روپے کے عوض جلسے میں لایا گیا۔ سرکاری پیسہ اور ذرائع کا بے دریغ استعمال کرنے کے باوجود سارا گراؤنڈ بھی نہ بھر سکے۔ خالی کرسیوں کی کوریج کرنے پر صحافیوں کو مارا پیٹا بھی گیا۔ فضائی کوریج کی اجازت بھی نہیں دی گئی۔ پورے کراچی کو کنٹینر لگا کر سیل کر دیا گیا۔پٹرول پمپ اور مارکٹس بند۔ کراچی کے لوگ بلاول کی اس سرکاری لانچنگ پر خوش دکھائی نہیں دیے۔لیاری جو کہ کسی زمانے میں پیپلز پارٹی کا گڑھ تھا اس نے بھی جلسے میں شرکت نہیں کی۔ناکام شاہ جلسہ گاہ خالی ہونے کے باوجود سڑک پر جیالوں کے کھڑے ہونے پر اتنا زور ڈالتا رہا کہ زور ڈالنے کے لیے دو فٹ مزید نیچا ہو جاتا۔ اگر سارے جلسوں کے ریکارڈ توڑ دیے پیپلز پارٹی نے تو میڈیا کو فضائی کوریج سے کیوں روکا؟ بکھرے ہوئے لوگ جن میں کوئی جوش جزبہ نہیں تھا، جو لوگ خود چل کر آتے ہیں ان کا انداز کچھ اور ہوتا ہے جو ہمیں صرف تحریک انصاف کے جلسوں میں نظر آتا ہے۔

ایک کے بعد ایک کرپشن زدہ انسان نے سٹیج کی لائیو کوریج کا فائدہ اُٹھاتے ہوئے خوب بھٹو کے گزرے ماضی کی یاد دلائی مگر حال کی کرپشن کا کسی کو خیال نہیں آیا۔ ایک کے بعد ایک تیر عمران خان پر داغے گئے کیونکہ وہ پاکستان سے کرپشن ختم کرنے کی بات کرتا ہے۔ جو میٹر ریڈر سے اسمبلیوں میں پہنچنے والوں کی روزی روٹی ہے۔ شرمیلا فاروقی جنہیں تحریک انصاف کی خواتین کی سرخی پورڈر اور پارٹی ترانوں پر جھومنے پر شدید اعتراض تھا، میدان میں کھل کر ڈانس کیا ۔ زرداری نے اپنی کامیاب کرپشن اور ناکام سیاست کو ایک نئی زندگی دینے کے لیے بلاول کو میدان میں پیش کیا۔ بلاول صاحب ٹیلی پورٹر پر رومن اُردو (انگلش)میں لکھی تقریر کو اپنے خاص انداز میں پیش کرتے رہے اور پورے پاکستان کو یہ بتا دیا کہ بھٹو کی سیاست ختم ہو چکی اور اب زرداری کی سیاست چل رہی ہے۔ یہ پورے پاکستان کے لیے ایک خوشی آئند بات ہے کہ کئی دہایوں کی کرپشن کے بعد اب پاکستان کی دو بڑی جماعتیں اب اپنے خاتمے کی جانب گامزن ہیں۔ ان کی بقا ء صرف اور صرف ایک صورت میں ہے کہ یہ اپنے لیڈروں کا احتساب کریں اور ایک نئی کرپشن سے پاک قیادت کو تیار کریں۔ جو کہ ابھی کسی صورت ممکن نظر نہیں آتا کیونکہ یہ جماعتیں کرپشن کو اپنا حق سمجھتی ہیں اور جہالت اور لاقانونیت سے یہ ملک پر قابض ہیں۔ اب ان کے خاتمے سے ہی نئے پاکستا ن کا قیام ہوگا۔ انشااﷲ

Help us spread the message of change - Share with your friends